Advertisements

دوست محمد کھوسہ کے خلاف اپنی ہی بیوی کو اغوا کرنے کا مقدمہ درج

-->

Former Chief Minister Dost Muhammad Khosa is facing the case in court for kidnapping his own second wife Actress Sapna, Khosa married with her second wife Zeba known as Sapna before approx. 30 months ago. He met with Sapna in a marriage ceremony of a friend and then fall in her love and got married.
dost muhammad khosa scandals

سابق وزیراعلیٰ اور موجودہ وزیرِبلدیات پنجاب دوست محمد کھوسہ کے خلاف اپنی دوسری بیوی اداکارہ سپنا کے اغواء کا کیس لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس شیخ عظمت سعید کی عدالت میں زیر سماعت ہے ۔ عدالت نے دوست محمد کھوسہ کو16نومبر بروزمنگل عدالت کے روبرو پیش ہونے کا حکم دیا ہے۔
سینئر صوبائی وزیر پنجاب اورمسلم لیگ نواز پنجاب کے صدر سردار ذوالفقارعلی خان کھوسہ جو میاں نواز شریف اور میاں شہباز شریف کے دست راست مانے جاتے ہیں کے سب سے چھوٹے صاحب زادے دوست محمد کھوسہ نے 23سالہ زیبا عرف سپنا سے تقریباََ اڑھائی سال قبل شادی کی تھی ۔ وہ سپناسے 28فروری 2011کو ایک بیٹی کے باپ بھی بنے۔
تفصیلات کے مطابق سپنا کی بڑی بہن حنا خان نے ہائی کورٹ لاہور میں کیس دائر کرتے ہوئے موقف اختیار کیا ہے کہ کہ دوست محمد کھوسہ نے اپنے دوستوں فہیم،حیدر بخاری ،سجاد عرف چنوں اور ڈرائیور یٰسین کی مدد سے سپنا اور اپنی چار ماہ کی بیٹی مہ گل کو 22جون 2011کی رات جوہر ٹاؤن میں ان کے گھرسے اغواء کیا اور GOR1میں واقع اپنی سرکاری رہائش گاہ لے جا کر تشدد کا نشانہ بنایا۔
اسی دن سپنا کی اپنے گھر والوں سے آخری مرتبہ بات ہوئی اور تب سے اس کے دونوں موبائل نمبر زبند مل رہے ہیں۔ اگر دوست محمد کھوسہ سے اس بارے ایک دو مرتبہ فون پر معلوم کرنے کی کوشش کی تو اس نے سپنا کے بڑے بھائی محمدامین اور سب سے چھوٹے بھائی پندرہ سالہ سلمان کو جان سے مار نے اور سنگین نتائج کی دھمکیا دیں۔تاہم سپنا اور اس کی بیٹی مہ گل کا تاحال کچھ پتہ نہیں چل سکا کہ وہ زندہ بھی ہے یا نہیں۔
خبیرپختون خواہ ضلع مردان کے علاقہ (ہوتی) سے تعلق رکھنے والے سپنا کے بھائی بہنوں نے ٹاپ سٹوری آن لائن سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ سپنا نے PTVکراچی سینٹرسے ہدایات کار برکت صدیقی کی ڈرامہ سیریل’ مجھے پیار چاہیے‘ میں اداکار عدنان صدیقی کے ساتھ اہم رول ادا کیا ۔اس کے علاوہ ارباز خان کے مدمقابل 3پشتو فلمیں انداز،غلامی نمانم اور مسافر میں مرکزی کردار ادا کیا۔
دوست محمد کھوسہ اور سپنا کی ملاقات کسی مشترکہ دوست کی سالگرہ کی تقریب میں ہوئی اور یہ ملاقات بعد میں شادی کا پیش خیمہ بنی ۔دوست محمد کھوسہ نے شادی کے بعد سپنا کو اپنے گھر میں نہیں رکھابلکہ سپنا اپنے بہن بھائیوں کے ساتھ ہی رہی۔اور اسی گھر میں ہی وہ سپنا سے ملنے آتاتھا۔اور جب بھی ملنے آتا تو اس کے ساتھ مسلح گارڈز کے علاوہ اس کے جو دوست ہمیشہ اس کے ساتھ ہوتے ان میں طیب لاشاری ،سجادعرف چنوں،فہیم،رانااکبر،حیدربخاری اور میاں سلطان محمود ڈاہا شامل ہیں۔
ان سب نے سپنا کو اپنی منہ بولی بہن بنا رکھا تھا۔سجاد عر ف چنوں سپنا کو ماں جی کہہ کر مخاطب کرتاتھا اور ہمیشہ سپنا کے قدموں میں بیٹھتا تھا۔بچی کی پیدائش سے پہلے دوست محمدکھوسہ سپنا کو سیر و تفریح کے لئے دبئی اور پھر لندن بھی لے کر گیا۔جبکہ دوست محمد کھوسہ کا کہنا ہے کہ اس نے پچھلے سال سپنا کو طلاق دے دی تھی جس کے بارے میں حنا خان کا کہنا ہے کہ یہ سراسر جھوٹ ہے۔
ٹاپ سٹوری آن لائن کو ملنے والی دستاویزات کے مطابق دوست محمد کھوسہ اپنی بیوی سپنا کو PIAکی فلائٹ نمبر PK757سے 28دسمبر2010کو11:35پرلاہور سے لندن سیر کیلئے بھی لے کر گیا۔زیبا کی ٹکٹ نمبر 2142753950709جبکہ دوست محمد کھوسہ کی ٹکٹ نمبر2142753950709تھی اور ان کا پسنجر نیم ریکارڈ JKFJIFتھا۔ان کی لندن سے واپسی6جنوری 2011بروز جمعرات فلائٹ نمبرPK758سے 8:40پر لاہور علامہ اقبال ائیرپورٹ پر ہوئی۔اور واپسی پر ان کاPNR(LJZJSA)تھا۔اس ٹور میں دوست محمد کھوسہ کا دوست حیدر بخاری بھی ان کے ہمراہ تھا جس کا PNR(JTVSOL)اور اس کا ٹکٹ نمبر 2142753950708تھا اور یہ ٹکٹس دن ائیر ٹریول 3LG،ہل آرکیڈ 5،ڈیوس روڈ لاہورکے مالک چوہدری زاہد نے فروخت کیں۔

دوست محمد کھوسہ اور سپنا کی ملاقات کسی مشترکہ دوست کی سالگرہ کی تقریب میں ہوئی
مقدمہ کی مدعیہ دو بچوں کی ماں اداکارہ سپنا کی بہن حنا خان نے بتایا کہ دوست محمد کھوسہ سپنا کو کئی بار ڈیرہ غازی خان بھی لے کر گیاوہاں بھی اپنے فارم ہاؤس میں وہ سپنا کو زدوکوب کرتا رہتا تھاجس کی گواہ سپنا کی بھانجی ہے جو سپنا کے ساتھ ہر مرتبہ ڈیرہ غازی خان گئی۔سپنا کی سب سے بڑی بہن ثمینہ خان نے دکھ اور رنج کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ کہ اگر سپنا دوست محمد کھوسہ کی سب سے پہلی بیوی عائشہ بخاری کی طرح سردار ذوالفقارعلی خان کھوسہ کے قریبی دوست سابق کرکٹر سلیم الطاف کی بیٹی اورنعیم بخاری کی بھتیجی ہوتی تو دوست محمد کھوسہ سپنا کو کبھی مار پیٹ اور اغواء کرنے کی جراء ت نہ کرتا۔
8بہنوں اور 4بھائیوں میں سپنا کا نمبر گیارہواں ہے اور بہنوں میں سب سے چھوٹی ہے۔سپنا کے بھائی محمد امین نے بتایا کہ سپنا کے ہاں بیٹی کی پیدائش حمید لطیف ہسپتال گارڈن ٹاؤن لاہور میں28فروری 2011 کو ہوئی۔اور اب سپنا کی بیٹی لگ بھگ 8ماہ کی ہو گی۔
محمد امین نے کہا کہ وزیراعلیٰ خیبر پختوانخواہ امیر حیدر ہوتی اور ہمار ا تعلق ایک ہی گاؤں سے ہے۔اگر دوست محمد کھوسہ نے ہماری بہن اور بھانجی کو زندہ سلامت واپس نہ کیا تو پھر انہیں مدد کے لیے پکاریں گے۔
سپنا کی بہنوں نے کہا کہ 4ماہ سے ایک تو ان کی معصوم بہن کا کچھ پتہ نہیں اوپر سے سے دوست محمد کھوسہ اوراس کے دوست سجادعر ف چنوں،فہیم ،میاں سلطان ڈاہااور حیدر بخاری آئے دن انہیں جان سے مارنے کی دھمکیاں دیتے رہتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ سپنا کا سراغ دوست محمد کھوسہ کے انہیں دوستوں سے ملے گا جو اب تک کھلے عام گھوم رہے ہیں۔
اسی بات کا اظہارسپنا کی بہن حنا خان کے وکیل محمداظہر صدیق نے بھی کیا کہ وہ ادارے ’ جوڈیشل ایکٹیوزم پینل ‘کے تحت جب سے سپنا اغواء کیس کی کی پیروی کر رہے ہیں انہیں بھی دوست محمد کھوسہ ڈرانے دھمکانے کیلئے اوچھے ہتھکنڈے استعمال کر رہا ہے۔
پنجاب یونیورسٹی کے سالانہ امتحان2003میں جرنلزم،پنجابی اور فارسی کے مضامین کے ساتھ رولنمبر065612رجسٹریشن نمبر2003-z-32 کے تحت BAکے امتحانات دے کر اسلامیات اور مطالعہ پاکستان میں فیل ہونے والے دوست محمد کھوسہ نے اپنے سیاسی سفر کا آغاز اپنے والد کے اگست 1999کو گورنر کا حلف لینے کے بعد PP244شہرڈیرہ غازی خان کی خالی ہونے والی نشت پرپہلی بارضمنی الیکشن پاکستان مسلم لیگ کی ٹکٹ پر لڑا اور ایم پی اے منتخب ہوئے۔لیکن ان کے منتخب ہونے کے ایک ماہ بعد ہی اسمبلیاں ٹوٹ گیءں۔بعد ازاں بلدیاتی الیکشن میں ڈیرہ غازیخان کی یونین کونسل چورہٹہ کے ناظم منتخب ہوئے۔
فروری 2008کے عام انتخابات میں دوست محمد کھوسہ PP244سے ممبر پنجاب اسمبلی منتخب ہوئے۔اس الیکشن میں پنجاب اسمبلی کی 371نشتوں میں سے پاکستان مسلم لیگ(ن) نے 171نشستیں حاصل کیں۔وزیراعلیٰ پنجاب نے پنجاب اسمبلی میں اپنی آمد تک وزیراعلیٰ پنجاب کی پگ دوست محمد کھوسہ کے سر پر رکھی۔اور دوست محمد کھوسہ 40دن سے زائد وزیراعلیٰ پنجاب بھی رہے۔بعد ازاں پنجاب کی وزارت اعلیٰ کا منصب میاں شہباز شریف نے خود سنبھالا تو دوست محمد کھوسہ کو وزیر بلدیات پنجاب کے قلمدان اور بلٹ پروف گاڑی سے نوازا۔
اب دیکھنا یہ ہے کہ آیا دوست محمد کھوسہ 16نومبر کو اپنی صفائی کیلئے عدالت کے روبرو پیش ہوتے ہیں۔یاسیاسی اثرورسوخ استعمال کر تے ہوئے طاقت کا مظاہرہ کر کے اپنے اوپر قائم دوہرے اغواء کے مقدمے کو خارج کرواتے ہیں جیسے اسی کیس کو ایڈیشنل اینڈ سیشن جج لاہور نذیر احمدنے 16جولائی کو صر ف اس بنا پر خارج کر دیا کہ مقدمے کی پیروی نہیں کی جا رہی۔13ستمبر کو جوڈیشل ایکٹیوزم پینل نے دوبارہ درخواست دائر کی تو ایڈیشنل اینڈ سیشن جج نذیر احمد صاحب نے 15ستمبرکو درخواست اس لئے خارج کر دی کہ جوڈیشل ایکٹیوزم پینل متاثرہ فریق نہیں ہے۔
پھر زیبا عرف سپنا کی بہن حنا خان کی طرف سے 19اکتوبر 2011کو ایک بار پھر درخواست دی گئی جس کی سماعت جسٹس شیخ عظمت سعید کی عدالت میں ہورہی ہے۔جبکہ سپنا کے بہن بھائی سپنا کی زندگی کی فکر میں خود بھی ڈرے سہمے زندگی گزار رہے ہیں۔
حال ہی میں وزیر اعلی شہباز شریف کے فرزند ارجمند رکن قومی اسمبلی حمزہ شہاز شریف پر بھی اپنی دوسری بیوی عائشہ ملک پر پولیس تشدد کرانے کا الزام سامنے آیا ہے۔ ایم کیو ایم نے عائشہ ملک پر ظلم کے خلاف قومی اسمبلی میں آواز اٹھائی تومسلم لیگ نواز کے ارکان نے اپوزیشن لیڈر چوہدری نثار علی خان کی قیادت میں زبردست ہنگامہ کرتے ہوئے پیغام دیا کہ ہاؤس آف شریف کا پرنس اپنی سیاسی حیثیت استعمال کرتے ہوئے جو بھی کرے اس کے خلاف بات نہیں ہو سکتی۔

Source: topstoryonline.com

© 2014 Just Scandals. All rights reserved.
Free Stock Photos | Islamic Wallpapers .
Free WordPress Themes
freshlife WordPress Themes Theme Junkie